Poetry

غزل – گئے موسم میں جو کھلتے تھے گلابوں کی طرح

poetry

گئے موسم میں جو کھِلتے تھے گلابوں کی طرح دل پہ اُتریں گے وہی خواب عذابوں کی طرح راکھ کے ڈھیر پہ اب رات بسر کرنی ہے جل چکے ہیں مرے خیمے، مرے خوابوں کی طرح ساعتِ دید کے عارض ہیں گلابی اب تک اولیں لمحوں کے گُلنار حجابوں کی طرح وہ سمندر ہے تو پھر رُوح کو شاداب کرے ...

Read More »